عجب قیامت کا حادثہ ہے

عجب قیامت‎ ‎کاحادثہ ھےکہ اشک ھیں آستین نھیں ھے
زمین کی رونق اجھڑ گئ ھی،فلک پہ مھر مبین نھیںھے
تری جدائ میں مرنے والے وہ کون ہے جو حزیں نہیں ھے
مگر تیری مرگ ناگہاں کا،مجھے ابھی تک یقیں نہیں ھے